mansoorafaq.com

Sunday, 28 October 2012

آسمانوں کے دفینے کی طرف آنکھیں ہیں





آسمانوں کے دفینے کی طرف آنکھیں ہیں
خاکِ طیبہ کے خزینے کی طرف آنکھیں ہیں

لوگ مشکل میں عبادت کریں واشنگٹن کی
شکر ہے اپنی مدینے کی طرف آنکھیں ہیں 

آ رہا ہے جو سرِ عرش سے میری جانب 
اُس اترتے ہوئے زینے کی طرف آنکھیں ہیں 

اِس میں اک نام دھڑکتا ہے بڑے زور کے ساتھ
اپنی تو اپنے ہی سینے کی طرف آنکھیں ہیں 

روضے کی جالیاں چھونے کا شرف جس کو ملا
اُس انگوٹھی کے نگینے کی طرف آنکھیں ہیں 

جس میں آیا تھا اجالوں کا پیمبر منصور
اُس بہاروں کے مہینے کی طرف آنکھیں ہیں 

 منصور آفاق 

No comments:

Post a Comment